صفحہ اول | کالم | چناب نگر کے رہائشی قادیانی لوگ اپنے گھروں میں علماء حق کی پیش کردہ قبول اسلام کی دعوت کو اپنے کانوں سے سنتے ہیں ۔

چناب نگر کے رہائشی قادیانی لوگ اپنے گھروں میں علماء حق کی پیش کردہ قبول اسلام کی دعوت کو اپنے کانوں سے سنتے ہیں ۔

Font size: Decrease font Enlarge font
چناب نگر کے رہائشی قادیانی لوگ اپنے گھروں میں علماء حق کی پیش کردہ قبول اسلام کی دعوت کو اپنے کانوں سے سنتے ہیں ۔

بارہ ربیع الاول چناب نگر میں قادیانیوں کو دعوت اسلام کا نظارہ

قاضی محمد یعقوب

بارہ ربیع الاول 1441ھ مطابق دس ستمبر2019 بروز اتوار محترم شاہد اقبال کی زیر قیادت حافظ محمد عرفان اور جناب مظہر حسین صاحب (عوامی میڈیکل سٹور تلہ گنگ ) کے ہمراہ راقم کو عالمی مجلس احرار اسلام پاکستان زیر اہتمام جامع مسجد احرار چناب نگر میں منعقدہ 42 ویں عظیم الشان تحفظ ختم نبوت کانفرنس اور چناب نگر کے رہائش پذیر قادیانیوں کو پر خلوص دعوت اسلام دینے کی غرض سے نکالے گئے ایمان پرور جلوس میں بتوفیق الہی شرکت کی سعادت حاصل ہوئی ۔ مسجد کے بیرونی گیٹ پر استقبالیہ کیمپ میں کھڑے ڈاکٹرمحمد عمر فاروق احرار ، اور مولانا محمد شعیب خطیب جامع مسجد حنیفہ تریڑاں والی تلہ گنگ نے بڑی گرم جوشی کیساتھ مسکراتے ہوئے ہم کو خوش آمدید کہا ۔خواجہ خواجگان حضرت خواجہ خان محمد صاحب ;231; خانقاہ سراجیہ کندیاں شریف ضلع میانوالی کے بڑے فرزند ارجمند حضرت خواجہ عزیر احمد صاحب کی زیر صدارت کانفرنس کا آغاز تلاوت قرآن پاک اور نعت رسول مقبول ﷺ سے شروع ہوا ۔ سٹیج سیکرٹری کے فراءض مولانا تنویر الحسن خطیب جامع مسجد حضرت ابوبکر صدیق ;230; نے سرانجام دئیے ۔ صبح دس بجے سے نماز ظہر تک منعقدہ اس نشست میں ملک بھر سے تشریف لانے والے جید علمائے کرام ، محترم صحافی حضرات کے بیانات ہوئے اور معزز نعت خوان حضرات نے اپنا نعتیہ کلام بھی پیش کیا ۔تفصیلی خطاب عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت پاکستان کے نامور مبلغ و رہنما اور مایہ ناز مصنف و محقق حضرت مولانا محمد اسماعیل شجاع آبادی کا ہوا ، جس کا مختصر خلاصہ پیش خدمت ہے ۔ خطبہ مسنونہ کی تلاوت کے بعد مولانا نے فرمایا کہ تحفظ ختم نبوت کی تحریک کی ابتداء عہد نبوی ﷺ سے شروع ہوئی ، وہ تحریک چودہ صدیوں سے تسلسل کیساتھ آج بھی فتنہ قادیانیت کیخلاف جذبہ ایمانی کیساتھ پورے جوش و خروش سے رواں دواں ہے اور آج کا یہ بابرکت اجتماع بھی اسی تسلسل کا حصہ ہے، جس میں آپ خوش نصیب حضرات اور میں بھی بفضل باری تعالی شریک ہوں ۔مولانا نے فرمایا کہ دور رسالت ماب ﷺ میں اسود عنسی نامی ایک بدبخت نے جب اپنے نبی ہونے کا جھوٹا دعوی کیا تو آقا کریم ﷺ کے حکم پر آپ ﷺ کے ایک جانثار صحافی حضرت فیروز والحی ;230; نے اس کو قتل کیا اور بذریعہ وحی آپﷺ کو اسکے جہنم رسید ہونے کی اطلاع دی گئی ، تو آپ ﷺ نے حضرات صحابہ کرام ;230; کو اس خوشخبری سے آگاہ کرتے ہوئے فرمایا ، ’’ فیروز فلاح پا گیا ‘‘ اور یوں حضرت فیروز والحی ;230; کو تاجدار ختم نبوت ;248; کی زبان اطہر سے دخول جنت کا شانہ اور اعزاز حاصل ہوا ۔دوسرے مدعی نبوت مسیلمہ کذاب اور اس کے ماننے والوں کی سرکوبی کیلئے اولین محافظ حضرت ابوبکر صدیق اکبر ;230; نے حضرت خالد بن ولید ;230; کی زیر کمان لشکر اسلامی کو بھیجا ، جنگ ہوئی، جس میں مسیلمہ کذاب خود اور اس کو ماننے والے تیس ہزار کے قریب مرتدین جہنم رسید ہوئے اور بارہ سو صحابہ کرام ;230; تحفظ ختم نبوت کے مقدس مشن کی خاطر اس جنگ یمامہ میں رتبہ شہادت پر فائز ہوئے ۔
آپ نے بتایا کہ سابقہ ادوار میں جس وقت بھی کسی ملعون نے اپنے نبی یا رسول ہونے کا جھوٹا دعوی کیا تو اس وقت کے اہل ایمان کے ہاتھوں وہ کیفر کردار کو پہنچا اور موجودہ دور کے قادیانی فتنہ کیخلاف تحریک تحفظ ختم نبوت کا آغاز حضرت علامہ انور شاہ کشمیری ;231; کی شب بیداری کی دعاءوں اور آپ کے کہنے پر امیر شریعت حضرت مولانا سید عطاء اللہ شاہ بخاری ;231; کی زیر قیادت شروع ہوا ، آج کا یہ مبارک جلسہ اور دعوت اسلام کا جلوس اسی تحریک تحفظ ختم نبوت کا تسلسل ہے ۔علاوہ ازیں آپ نے سامعین کرام کی پرزور تائید سے موجودہ حکمرانوں کو یہ بات سمجھائی کہ اگر تم نے یہود و نصاری کے دباءو میں آکر قانون ناموس رسالت اور ختم نبوت کی آئینی شقوں میں کوئی ردوبدل یا ترمیم کی کوشش کی تو ملک بھر کے لاکھوں ختم نبوت کے پروانے اپنی جانیں تو قرآن کر دیں گے مگر تم کو ہر گز ایسا نہیں کرنے دیں گے ۔آخر میں آپ نے اس بابرکت پروگرام میں شرکت کی دعوت دینے پر مولانا سید محمد کفیل شاہ بخاری کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتے ہوئے ان کو اس عظیم الشان جلسہ کے انعقاد اور دعوت اسلام کے جلوس کے اہتمام پر مبارکباد دی اور مذکورہ کانفرنس و جلوس کے سرپرست اعلی حضرت پیر جی سید عطا المہیمن بخاری کی صحت یابی کیلئے دعا بھی کی ۔ یاد رہے کہ حضرت پیر جی شدید علالت کے باوجود بھی ایمبولینس میں لیٹ کر ملتان سے دور دراز کا سفر کرکے چناب نگر تشریف لائے ۔آخر میں مولانا سید محمد کفیل شاہ بخاری نائب امیر عالمی مجلس احرار السلام پاکستان نے دعوت اسلام جلوس کے بارے میں ضروری ہدایات دیں اور پھر نماز ظہر باجماعت ادائیگی کے بعد حضرت پیر جی کی زیر قیادت جامع مسجد احرار سے یہ عظیم الشان جلوس روانہ ہوا ۔ ، ملک بھر سے آئے ہوئے سینکڑوں فدایان ختم نبوت کے نعرہ تکبیر اللہ اکبر ، تاج و تخت ختم نبوت زندہ باد اور فرما گئے یہ ہادی ۔ لا نبی بعدی ۔ کے فلک شگاف نعروں سے چناب نگر کی بدبودار کفریہ فضا بھی معطر و منور ہوگئی ۔ اقصی چوک پر مولانا تنویر الحسن نے تقریر فرمائی ، اور ایوان محمود کے سامنے مولانا سید محمد کفیل بخاری نے محبت بھری زبان میں قادیانیوں کو قبول اسلام کی دعوت دی اور ان کی ہدایت کیلئے دعا کروانے کے بعد یہ ایمان افروز جلوس بوقت عصر اختتام پذیر ہوا ۔قارئین کرام ! ملک بھر میں یہ ’’دعوت اسلام جلوس ‘‘ اس لحاظ سے منفرد ہے کہ اس میں چناب نگر کے رہائشی قادیانی لوگ اپنے گھروں میں علماء حق کی پیش کردہ قبول اسلام کی دعوت کو اپنے کانوں سے سنتے ہیں ۔ آگے ہدایت کا ملنا اللہ کریم کے ذمہ ہے ۔ تاج و تخت ختم نبوت زندہ باد

Subscribe to comments feed Comments (0 posted)

total: | displaying:

Post your comment

  • Bold
  • Italic
  • Underline
  • Quote

Please enter the code you see in the image:

Captcha
  • Email to a friend Email to a friend
  • Print version Print version
  • Plain text Plain text

Tagged as:

No tags for this article

Rate this article

0