صفحہ اول | خبریں | ہالینڈ میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت منسوخ کیے جانے پر ملک بھر کی طرح تلہ گنگ میں یوم تشکر منایا گیا

ہالینڈ میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت منسوخ کیے جانے پر ملک بھر کی طرح تلہ گنگ میں یوم تشکر منایا گیا

Font size: Decrease font Enlarge font
ہالینڈ میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت منسوخ کیے جانے پر ملک بھر کی طرح تلہ گنگ میں یوم تشکر منایا گیا

تلہ گنگ(چودھری عامر ،چودھری عبدالجبار) ہالینڈ میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت منسوخ کیے جانے پر ملک بھر کی طرح تلہ گنگ میں یوم تشکر منایا گیا ۔تلہ گنگ کی مختلف دینی جماعتوں تحریک تحفظ ناموس رسالت ،عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت ،جمعیت علماء اسلام (ف) ،تحریک لبیک یارسول اللہ ﷺسمیت سول سوسائٹی کے نوجوانوں نے یوم تشکر منایا اور چوک صدیق آباد سے الکرم چوک تک ریلی نکالی جس میں مولانا عبیدالرحمن انور،مولاناصابر ایوب،قاری نورمحمد ،قاری زبیراحمد ،ملک طارق ایڈووکیٹ ،چوہدری عبدالجبار ،ملک محمد فاروق اعوان،مولانا خالد فاروق ،ملک ثوبان امتیاز ،چوہدری عامر حسین،حاجی ابراہیم توحیدی ،حافظ ادریس سمیت کئی جماعتوں کے مقامی قائدین نے شرکت کی اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہا کہ ہالینڈ میں اس طرح کے مقابلے مسلمانوں کے عالمی سطح پر جذبات مجروح کرنے اور اشتعال کا باعث بنیں گے۔مسلمان کسی بھی صورت ایسی گستاخانہ حرکت کبھی برداشت نہیں کرسکتا اور نہ ہی ہم سے توقع رکھی جائے کہ ہم ایسی گستاخی کو برداشت کرسکتے ہیں۔ اس حوا لے سے صوبائی اسمبلی پنجاب میں حافظ عماریاسر کی قرار داد سمیت دیگر حکومتی اقدامات اور امت مسلمہ کی بیداری کے نتیجہ میں ہالینڈ میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت منسوخ ہوئی اس پر امت مسلمہ آج یوم تشکر منارہی ہے۔مقررین نے مزید کہا کہ گستاخانہ خاکوں سے ہماری برداشت کا امتحان لیا گیا ہے اور یاد رکھا جائے کسی بھی ایسی مذموم حرکت پر ہر فورم پر اپنا احتجاج کا حق محفوظ رکھتے ہیں۔ایسی کسی بھی مذموم حرکت کیخلاف احتجاج کرنا ہر مسلمان کا ایمانی فریضہ اور حضور ﷺسے محبت کا تقاضہ ہے۔ مسلمان کیلئے آقائے دوجہاں ﷺکی ناموس سے بڑھ کر کچھ بھی نہیں۔ ہالینڈ پارلیمنٹ کے رکن کا گستاخانہ خاکوں کے مقابلوں کا اعلان کرکے پوری امت کی غیرت کو للکارا ہے چند برس قبل فرانس کے ایک جریدے کی جانب سے گستاخانہ خاکوں کی اشاعت سے مسلم دنیا کے ڈیڑھ ارب سے زائد مسلمانوں کے جذبات کوٹھیس پہنچا۔یہ وہ اقدام ہیں جو صرف مسلمانوں کے خلاف جاتے ہیں۔ یورپ اور غیر مسلم ممالک مسلمانوں کے حقوق غصب کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ تمام غیر مسلم دنیا مسلمانوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچانے کے درپے ہے۔ ہم کسی بھی مذہب اور عبادت گاہ کو نقصان پہنچانے کے خلاف ہیں تو پھر مسلمانوں کے جذبات سے کیوں کھیلا جارہا ہے، انبیائے کرام اور برگزیدہ ہستیوں کا احترام کیا جانا چاہیئے۔ان توہین آمیز خاکوں کی اشاعت کے عمل سے دنیا میں قیام امن کو نقصان ہوگا لہذا ایسے اقدامات سے اجتناب لازم ہے۔توہین آمیز خاکوں کی اشاعت پراو آئی سی کو اپنا مثبت کردار ادا کرنا ہوگااور اپنی ذمہ داریاں ادا کرتے ہوئے تمام اسلامی ممالک کو متحد کرکے اس قسم کے واقعات کی روک تھام کیلئے مستقل بنیادوں پرٹھوس اقدامات کرنا ہوں گے۔

Subscribe to comments feed Comments (0 posted)

total: | displaying:

Post your comment

  • Bold
  • Italic
  • Underline
  • Quote

Please enter the code you see in the image:

Captcha
  • Email to a friend Email to a friend
  • Print version Print version
  • Plain text Plain text

Tagged as:

No tags for this article

Rate this article

0